Author Topic: حکومت ’واحد قومی تعلیمی نصاب‘ پر نظرِ ثانی کرے، ماہرینِ تعلیم  (Read 131 times)

Offline AKBAR

  • Editorial board
  • Hero Member
  • *****
  • Posts: 4924
  • My Points +1/-1
  • Gender: Male
    • pak study

حکومت ’واحد قومی تعلیمی نصاب‘ پر نظرِ ثانی کرے، ماہرینِ تعلیم
 
ماہرین تعلیم نے واحد قومی نصاب پر مشاورتی اجلاس میں ملک میں واحد قومی نصاب پر تحفظات کا اظہار کیا۔ ماہرین تعلیم نے حکومت سے کہا کہ وہ اس نصاب پر نظرثانی کرکے تجاویز کو شامل کرے تاکہ یہ کمیونٹیز، والدین، اساتذہ اور بچوں کو بہتر تعلیمی نتائج حاصل کرنے میں مدد فراہم کرے۔

مشاورتی اجلاس کا انعقاد ’آواز فاؤنڈیشن پاکستان: سینٹر فار ڈیویلپمنٹ سروسز‘ نے کیا تھا تاکہ واحد قومی نصاب پر تبادلہ خیال کیا جا سکے اور اسٹیک ہولڈرز کو اپنے تحفظات کے ساتھ ساتھ سفارشات سے آگاہ کرنے کا موقع فراہم کیا جا سکے تاکہ اس نصاب کو یقینی طور پر ملک بھر میں نمائندہ دستاویز بنایا جائے۔

واحد قومی نصاب صنفی مساوات اور خواتین کو بااختیار بنانے کے ساتھ تعلیم کے عالمی رجحانات کو اپناتے ہوئے جدید تعلیم، ہنر کی ترقی اور ٹیکنالوجی پر مرکوز ہونا چاہئے۔

مشاورتی اجلاس میں پاکستان کولیشن فار ایجوکیشن، پاکستان پرائیویٹ اسکولز اینڈ کالج ایسوسی ایشن، پاکستان پیرنٹس ایسوسی ایشن، پاکستان ٹیچرز فورم کے عہدیداران، ماہرین تعلیم اور سول سوسائٹی کی تنظیموں کے اراکین نے شرکت کی۔ سینیٹر و رکن قائمہ کمیٹی برائے تعلیم، فیڈرل کالج آف ایجوکیشن اینڈ پروفیشنل ٹریننگ فوزیہ ارشد نے بھی اجلاس میں شرکت کی۔

سینیٹر فوزیہ ارشد نے اپنے تاثرات میں اس قومی مسئلے پر مشاورتی اجلاس کے انعقاد کو سراہا۔ انہوں نے یقین دلایا کہ حکومت مشاورتی اجلاس کے دوران اسٹیک ہولڈرز کی جانب سے پیش کیے گئے فوری اور عملی حل کی نشاندہی میں ہر ممکن تعاون فراہم کرے گی۔ انہوں نے مزید بتایا کہ حکومت نے نجی اسکولوں کو شامل کرنے کے بعد واحد قومی نصاب مرتب کیا ہے۔

انہوں نے آواز فاؤنڈیشن پاکستان: سینٹر فار ڈیویلپمنٹ سروسز اور تمام اسٹیک ہولڈرز پر زور دیا کہ وہ معیاری تعلیم کو یقینی بنانے کےلیے بچوں، والدین، اساتذہ اور معاشرے کی بہتری کےلیے سنگل قومی نصاب پر اپنی سفارشات مرتب کریں۔

انہوں نے ان سفارشات کو وفاقی وزارت تعلیم اور پیشہ ورانہ تربیت کے ساتھ ساتھ وزیراعظم پاکستان کے ساتھ ایک جامع واحد قومی نصاب کو اپنانے کےلیے اٹھانے کی یقین دہانی کرائی۔

ضیاء الرحمان، چیف ایگزیکٹیو آواز فاؤنڈیشن پاکستان نے واحد قومی نصاب کی حقیقی زندگی میں موافقت میں بہترین حل تلاش کرنے کی تجویز دی۔ انہوں نے مزید بتایا کہ واحد قومی نصاب پر فیڈ بیک/ تجاویز فیڈرل کالج آف ایجوکیشن اینڈ پروفیشنل ٹریننگ کے ساتھ ان کے فیڈ بیک پورٹل پر شیئر کی جاتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ میٹنگ کا مقصد مسائل کے حل پر تبادلہ خیال کرنا اور حکومت کو سفارشات پیش کرنا ہے تاکہ دیہی اور شہری علاقوں، نجی اور سرکاری اسکولوں کے ساتھ ساتھ ملک بھر کے مدارس کے طلباء کےلیے نصابی کتب اور نصاب میں یکسانیت کو یقینی بنایا جا سکے۔ سب ایک بنیادی اور آئینی حق ہے۔

حکومت کے منظور کردہ واحد قومی نصاب پر بحث کرتے ہوئے، ماہرین نے کہ نصابی کتابوں میں دی گئی تصویروں میں صنفی بنیاد پر مساوی نمائندگی کو یقینی بنانا چاہیے اور قائدانہ کرداروں میں خواتین کی شراکت کو ان کے مرد ہم منصبوں کے برابر اجاگر کیا جانا چاہیے۔

یہ بھی تجویز کیا گیا کہ نصابی کتابوں میں دی گئی تصویروں کو مذہبی اقلیتوں، معذوری کے ساتھ زندگی گزارنے والے اور خواجہ سرا اور جنس سے متعلق ڈریس کوڈ کے کسی امتیازی معیار کے بغیر معقول سمجھ اور نمائندگی کرنی چاہیے۔

ماہرین نفسیات کے ذریعے نصابی کتب کا جائزہ لینے کےلیے بھی سفارشات سامنے آئیں کیونکہ اس سے طلبہ کی تعلیمی اور نفسیاتی ضروریات کی تکمیل کو یقینی بنایا جائے گا۔ اجلاس میں لڑکیوں کی مساوی نمائندگی، نصاب کا صحیح ترجمہ، بہتر تفہیم اور معیاری تعلیم کےلیے نصاب اور نصابی کتب کے درمیان روابط پیدا کرنے کی بھی سفارش کی گئی۔

سسٹین ایبل ڈویلپمنٹ پالیسی انسٹی ٹیوٹ کے پالیسی ماہر ڈاکٹر شفقت منیر نے ثقافت کے تنوع کی بنیاد پر سنگل قومی نصاب کے ذریعے قوم پرستی کی تعریف کی طرف توجہ مبذول کروائی نہ کہ مذہب سے جیسا کہ اس وقت عکاسی کی جا رہی ہے۔

زہرہ ارشد، نیشنل کوآرڈینیٹر پاکستان کولیشن فار ایجوکیشن نے معیاری تعلیم کی ضرورت پر ہمدردی کا اظہار کیا تاکہ ہماری نسل معاہدوں اور اختلاف کے درمیان احترام کا تعین کر سکے۔ ہم نے اپنے تعلیمی نصاب میں تقسیم کر دی ہے، نصابی کتابیں جنہیں واحد قومی نصاب کے ذریعے ختم کرنے کی ضرورت ہے۔.

مریم امجد، پروگرام مینیجر آواز سی ڈی ایس پاکستان نے بچوں کو جدید اور جدید تعلیم کو یقینی بنانے کےلیے اساتذہ کو تربیت دینے کے حکومتی اقدام کو سراہا لیکن ساتھ ہی ساتھ اساتذہ کو جسمانی تحفظ اور زندگی کی مہارت پر مبنی تعلیم دینے پر زور دیا جائے۔