Library MCQS Sindh Study Punjab Study
PakStudy :Yours Study Matters

ڈائریکٹر جنرل پرائیویٹ انسٹی ٹیوشنز کا نجی تعلیمی اداروں کو انتباہ

Offline AKBAR

  • *****
  • 4901
  • +1/-1
  • Gender: Male
    • pak study
ڈائریکٹرجنرل پرائیویٹ انسٹی ٹیوشنز کا نجی تعلیمی اداروں کو انتباہ
کورس کی کتابیں،کاپیاں، اسٹیشنری خاص مقام سے خریدنے کا پابند نہ کیا جائے، شکایتی سیل بھی قائم کر دیا گیا،
غیر قانونی فیس وصول کرنے والے نجی تعلیمی اداروں کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کی جائے گی، مراسلہ جاری
کراچی:ڈائریکٹر جنرل پرائیویٹ انسٹی ٹیوشنز سندھ نے کراچی سمیت صوبے بھر کے تمام نجی تعلیمی اداروں کو متنبہ کرتے ہوئے کہا ہے
کہ اسکولز مالکان والدین کو نئے تعلیمی سال کیلئے کورس کی کتابیں،کاپیاں، اسٹیشنری یا یونیفارم اسکول یا کسی خاص مقام سے خریدنے کا پابند نہ کریں
اور نجی اسکولوں میں مختلف ایام منانے کے نام پر کوئی غیر قانونی فیس وصول نہ کی جائے، ہدایات پر عملدرآمد نہ کرنے اورغیر قانونی فیس وصول کرنے والے نجی تعلیمی اداروں کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔
ڈائریکٹوریٹ پرائیویٹ انسٹی ٹیوشنز نے اس ضمن میں ڈپٹی ڈائریکٹر کی سربراہی میں شکایتی سیل بھی قائم کر دیا ہے
جہاں والدین اپنی شکایات تحریری طور پر شناختی کارڈ اور موبائل نمبر کے ساتھ درج کرا سکیں گے تاکہ ان کی شکایات کا فوری ازالہ کیا جا سکے۔
ڈی جی پرائیویٹ انسٹی ٹیوشنز سندھ ڈاکٹر منسوب حسین صدیقی نے کہا کہ سندھ کے تمام نجی تعلیمی اداروں کو 25 مئی2021 اور10مارچ2020ء کو مراسلے جاری کئے گئے تھے
جن میں ان اسکولوں کی انتظامیہ کو ہدایت دی گئی تھی کہ سالانہ امتحانات کے نتائج کے ساتھ تمام بچوں کو درکار کتابیں ،کاپیاں ،اسٹیشنری اور یونیفارم وغیرہ کی فہرست فراہم کریں
تاکہ والدین اپنی مرضی سے ان اشیا کو خرید سکیں، مختلف ایام منانے کیلئے مختلف ناموں سے کوئی غیر قانونی فیس وصول نہ کی جائے
جبکہ نجی تعلیمی ادارے طلبہ سے صرف منظور شدہ فیس وصول کرنے کے پابند ہیں۔
تمام نجی تعلیمی اداروں کو مزید ہدایات جاری کی گئی ہیں کہ وہ ڈائریکٹوریٹ سے منظور شدہ فیس اسکول کے نوٹس بورڈ پر آویزاں کریں
 تاکہ والدین کو علم ہو سکے کہ انہیں کتنی ماہانہ فیس ادا کرنی ہے۔ اس سلسلے میں ڈائریکٹویٹ پرائیویٹ انسٹی ٹیوشنز سندھ ڈاکٹر منسوب حسین صدیقی نے اپنے دفتر میں ڈپٹی ڈائریکٹر رفیع الدین دکھن کی سربراہی میں شکایتی سیل بھی قائم کر دیا ہے،
اسی طرح سندھ بھر کے تمام ریجنل ڈائریکٹرز کو بھی ہدایت کی گئی ہے کہ وہ اپنے متعلقہ ریجنز میں اس حوالے سے شکایتی مرکز قائم کریں
جو شکایت ملنے پر ایسے نجی تعلیمی اداروں کا دورہ کر کے خلاف ورزی کے مرتکب اداروں کے خلاف کارروائی کی سفارش کرے،
کمیٹی کی رپورٹ پر ڈائریکٹر جنرل ایسے اداروں کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی عمل میں لائیں گے تاکہ والدین کو سہولت مل سکے۔